پاکستان تحریک انصاف کے رہنما اور وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کے بیان پر اپنے ردعمل میں کہا ہے کہ وہ ماضی کی سنی سنائی باتیں کر رہے ہیں وہ تو اُس وقت اس کھیل میں بھی نہیں تھے۔ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ بلاول کوبچپن سے جانتا ہوں ان کوبہت سی چیزوں کا علم نہیں، ابھی ان کا بچپنا ہے،ان کوکیا جواب دوں،درگزرکروں گا۔ موجودہ وزیر خارجہ اور پیپلز پارٹی کے دور حکومت میں اسی عہدے پر فائز شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ امریکی قونصل خانے کا اہلکار ریمنڈ ڈیوس کیوں اورکیسے گیا وہ تاریخ کا حصہ ہے، ریمنڈ ڈیوس کے معاملے پر کہا گیا تھا کہ اسے سفارتی استثنٰی دیا جائے۔ ان کا کہنا تھا کہ یوسف رضا گیلانی کوکہا تھا کہ میں دوسری وزارت نہیں لوں گا، مجھے پیٹرولیم کی وزارت دی جارہی تھی، مگر نہ لینے کا فیصلہ کیا، جس پر آصف زرداری نے ایوان صدر میں بلالیا اور دوسری وزارت کا حلف لینے کوکہا لیکن ان سے بھی کہا تھا کہ وزارت نہیں لوں گا۔ شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ جب مجھ پرذاتی حملے کیے گئے توپیپلزپارٹی چھوڑنے کا فیصلہ کیا، پیپلزپارٹی کی ٹکٹ تھی توجس نشست پرمنتخب ہوا اس سے مستعفیٰ ہوگیا، استعفیٰ دینے کے بعد ملتان گیا جہاں میرا فقید المثال استقبال ہوا۔ سندھ حکومت کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ سندھ ہماری اہم اکائی ہے،اس کی ضروریات کوپورا کریں گے، پنجاب حکومت کی کارکردگی اچھی ہے، سندھ حکومت کے اچھےاقدام کی تقلید کرتے ہیں تو ان کوخوشی ہونی چاہیے، ہم ایک دوسرے سے سیکھتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ سندھ کی قیادت کا ہمارے ساتھ اجلاس میں رویہ کچھ اور ہوتا ہے اور پریس کانفرنس میں کچھ اور ہوتا ہے، اس وقت سیاست کا ماحول نہیں ،نیشنل ایمرجنسی ہے۔ اس سلسلے میں پیپلز پارٹی کے رہنما قمر زمان کائرہ کا کہنا ہے کہ شاہ محمود قریشی کی بطور وزیر خارجہ کارکردگی اطمینان بخش نہیں تھی لیکن وہ بطور وزیر خارجہ ہی کابینہ میں رہنا چاہتے تھے۔ خیال رہے کہ شاہ محمود قریشی کی جانب سے سندھ حکومت پر تنقید پر بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ ہمیں پتا ہے کہ آپ نے اپنا سیاسی لوہا کیسے منوایا، ہمیں مجبورنہ کریں کہ ہم بتادیں کہ کس نے آپ کو وزیراعظم بننے کا خواب دکھایا۔ ان کا کہنا تھا کہ' وفاقی وزیرصاحب آپ نے ہماری جماعت کیوں چھوڑی ہمیں سب پتا ہے، آپ اب بھی تحریک انصاف یا عمران خان کا نہیں اپنا سیاسی لوہا منوانے کی کوشش کررہے ہیں' https://urdu.geo.tv/latest/221262-