بلوچستان میں قومی اسمبلی کے حلقے این اے 259 ڈیرہ بگٹی کے 29 پولنگ اسٹیشنز پر سپریم کورٹ کے حکم پر دوبارہ پولنگ ہوئی تاہم اس بار بھی جمہوری وطن پارٹی کے شاہ زین بگٹی نے برتری حاصل کرلی۔ غیر حتمی اور غیر سرکاری نتائج کے مطابق جمہوری وطن پارٹی کے شازین بگٹی کو آزاد امیدوار طارق محمود پر برتری حاصل ہے۔ حتمی نتیجہ آنے سے قبل ہی قومی وطن پارٹی کے کارکنوں نے جشن منانا شروع کردیا ہے۔ جولائی 2018کےعام انتخابات میں این اے 259 ڈیرہ بگٹی سے جمہوری وطن پارٹی کے سربراہ نوابزادہ شاہ زین بگٹی کامیاب ہوئے تھے تاہم ان کی کامیابی کو حلقے کے ایک آزاد امیدوار طارق محمود کھیتران نے سپریم کورٹ میں چیلنج کرتے ہوئے 29 پولنگ اسٹیشنوں پر دوبارہ پولنگ کی درخواست کی تھی۔ سرکاری نتیجے کے مطابق این اے 259 ڈیرہ بگٹی کوہلو سے جمہوری وطن پارٹی کے نوابزادہ شاہ زین بگٹی نے 22 ہزار787 ووٹ لے کر کامیابی حاصل کی تھی جب کہ آزاد امیدوار میر طارق محمود کھیتران 21ہزار 213 ووٹ لے کر دوسرے نمبر پر رہے تھے۔ سپریم کورٹ کے حکم پر ڈیرہ بگٹی میں این اے 259کے 29 پولنگ اسٹیشنوں پر دوبارہ پولنگ کے لیے انتظامات کیے گئے تھے۔ پولنگ کا عمل صبح 8 بجے شروع ہوا جو بغیر کسی وقفے کے شام 5 بجے تک جاری رہا۔ پولنگ اسٹیشنوں میں 111 پولنگ بوتھ قائم کئے گئے جن میں 65 مردوں اور 46 خواتین ووٹرز کے لئے مخصوص تھے، ان میں کل ووٹرزکی تعداد 47 ہزار 269 تھی جن میں 27ہزار 899 مرد اور 19 ہزار 370 خواتین ووٹرز شامل ہیں۔ حلقے میں ری پولنگ کے لیے ریجنل الیکشن کمشنر عمران احمدکو ڈسٹرکٹ ریٹرننگ افسر اور ڈسٹرکٹ الیکشن کمشنر ڈیرہ بگٹی سیف الدین کوریٹرننگ افسر مقرر کیا گیا تھا۔ این اے 259 میں الیکشن میں حصہ لینے والوں کی تعداد 31 ہے تاہم نمایاں امیدواروں میں جمہوری وطن پارٹی کے شاہ زین بگٹی، آزاد طارق محمودکھیتران اور پیپلز پارٹی کے باز محمدکھیتران شامل ہیں۔ https://urdu.geo.tv/latest/208414-